پاکستان

سفر نامہ

قیصر عباس

دن بھر کے سار ے
دکھوں، راحتوں
چاہتوں اور نفرتوں
کا ٹوٹا بدن سنبھالے
خوابوں کی خوش رنگ
چادر تلے
ہررات سوتاہوں
ہررات مرتاہوں
ایک نئے جنم کی امید لئے

اور ہرنئی صبح
سورج کی نئی کرن
کے ساتھ
نت نئی تازہ خواہشوں
اور امیدوں کی جھولی لئے
اپنے بارہ گھنٹوں کی
تلاش میں
پھر نکلتاہوں
ایک نیا جنم لے کر

میں رات اور دن
امیدویاس
روشنی اور اندھیروں
پر پھیلے
چوبیس گھنٹوں کے
اس سفرکا
ایک گمنام مسافر
جس کا اگلا پڑاؤ
خود اس کے گمان
اور ادراک کی
حدوں سے
باہر ہے
ہررات سوتاہوں
ہر رات مرتا ہوں
ایک نئے
جنم کی امید لئے!

Qaisar Abbas

ڈاکٹر قیصرعباس روزنامہ جدوجہد کی مجلس ادارت کے رکن ہیں۔ وہ پنجاب یونیورسٹی  سے ایم اے صحافت کے بعد  پاکستان میں پی ٹی وی کے نیوزپروڈیوسر رہے۔ جنرل ضیا کے دور میں امریکہ آ ئے اور پی ایچ ڈی کی۔ کئی یونیورسٹیوں میں پروفیسر، اسسٹنٹ ڈین اور ڈائریکٹر کی حیثیت سے کام کرچکے ہیں۔ آج کل سدرن میتھوڈسٹ یونیورسٹی میں ایمبری ہیومن رائٹس پروگرام کے ایڈوائزر ہیں۔