دنیا

کیا او آئی سی فرانس سے لڑائی مول لے گی؟

وزیر اعظم صاحب! ہم آپ سے متفق ہیں کہ فرنچ لوگ بہت برے، توہین مذاہب کا ارتکاب کرنے والے اور سیکولرازم کے مارے ہوئے ہیں۔ کتنے افسوس کی بات ہے کہ کتنے ہی مسلمان، بالخصوص پاکستان کے شہری، فرانسیسی ویزہ لینے قطاروں میں لگے ہوئے ہیں جبکہ لاکھوں مسلمان فرانس میں رہ رہے ہیں۔ کوئی فرانس یا یورپی یونین چھوڑنے پر تیار نہیں۔

اتحادی فوجوں کا انخلا اور افغانستان میں نئی صف بندیاں: ایک مکالمہ

گزشتہ 40 عشروں سے افغانستان دنیاکی دو بڑی طاقتوں کے درمیان سرد جنگ اور پھر خونی جنگ کا مرکز رہا ہے۔ اس کا آغاز 1979ء میں اس وقت ہوا جب سوویت یونین کی فوجیں افغانستان میں داخل ہوئیں۔ ایک عرصے تک خون خرابے کے بعد، جس میں افغانیوں کی ایک بڑی تعداد ہلاک ہوئی، ملک اقتصادی اور سماجی طور پر تباہی کے کنارے پہنچ گیا اور پھر سوویت یونین کوملک سے نکلنا پڑا۔

آکسیجن اور ویکسین کو ترستی ایٹمی طاقتیں بمقابلہ سوشلسٹ کیوبا

اپنے ایک اور انٹرویو میں فیدل کاسترو نے ایٹم بم بنانے کی بابت کہا تھا کہ سرد جنگ کے دوران کیوبا کے لئے ایٹم بم بنانا کوئی مسئلہ نہیں تھا کیونکہ سوویت روس کی مدد سے یہ کام با آسانی کیا جا سکتا تھا مگر بقول کاسترو ہم یہ بم ماریں گے کسے؟ امریکی مزدوروں کو جو ہمارے بھائی ہیں؟

انڈیا میں کرونا وائرس سے ریکارڈ ہلاکتیں: ویکسین دوسرے ملکوں کو برآمد کی جا رہی ہے!

دہلی سمیت ملک کی بیشتر ریاستوں میں آکسیجن گیس کی فراہمی لوگوں کے علاج کے لئے ناکافی ہے اور ہسپتالوں نے جگہ نہ ہونے کی بنا پر لوگوں کو داخل کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ ملک کی دو دواساز کمپنیوں نے ہسپتالوں اور لوگوں کے لئے کرونا وائرس کی ویکسین کی بھاری قیمتیں مقرر کر دی ہیں اور اب ویکسین کی عام قیمت چھ سو روپے فی انجکشن یا اس سے زیادہ ہو گئی ہے۔