پاکستان

یہ حکومت تعلیم پر جو حملہ کرنے لگی ہے، ضیا بھی نہ کر سکا

پرویز امیر علی ہود بھائی

پاکستان! خبردار! عمران خان کی حکومت پاکستان کے تعلیمی نظام پر ایسا مہلک وار کرنے جا رہی ہے جس کی مثال ماضی میں نہیں ملتی۔ سنگل نیشنل کریکلم (ایس این سی) یعنی یکساں نصابِ تعلیم کے نام پر جو تبدیلیاں متعارف کروانے کا منصوبہ ہے وہ تو ضیا الحق کی مذہبی جنونی آمریت نے بھی نہ سوچی تھیں۔ ان تبدیلیوں پر اگلے سال سے عمل درآمد شروع ہو گا۔

بظاہر تمام اسکولوں میں یکساں نصاب ِ تعلیم ایک قابل ستائش عمل ہے۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ یکساں نصاب کے نتیجے میں اس نفرت انگیز طبقاتی نظام تعلیم کا خاتمہ ہو جائے گا جو روز اول سے تعلیمی نظام کے پاوں کی بیڑی بنا ہوا ہے۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا ہے کہ وقت کے ساتھ ساتھ ایلیٹ پرائیویٹ اسکولوں کے طلبہ اورغیر معیاری سرکاری اسکولوں کے طلبہ کے مابین فرق بڑھتا ہی چلا جا رہا ہے۔

ایسے میں کیا یہ ایک اچھا اقدام نہیں کہ تمام بچے ایک جیسا نصاب پڑھیں اور ایک ہی پیمانے پر ان کی قابلیت کا امتحان لیا جائے؟

بظاہر اخلاقی لحاظ سے اس پر کشش سوچ کو ہائی جیک کر لیا گیا ہے، اس کی روح کو اس بری طرح سے کچل دیا گیا ہے کہ اصل مقصد ہی فوت ہو گیا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ جو کوتاہ نظر لوگ، جن کے ہاتھ میں پاکستان کے مستقبل کی باگ ڈور ہے، وہ اپنے باس (وزیر اعظم) کی طرح مدرسہ اسٹیبلشمنٹ کو خوش کرنا چاہتے ہیں۔

2016-17 میں وزیر اعظم عمران خان کو اس وقت شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا جب انہوں نے مولانا سمیع الحق کے مدرسے کے لئے کروڑوں روپے کی امداد دی۔ یاد رہے مولانا سمیع الحق، جو پراسرار حالات میں اپنے ہی ایک کارندے کے ہاتھوں ہلاک ہو گئے تھے، طالبان کے خود ساختہ ابا جی تھے۔

ابھی تک پہلی سے پانچویں جماعت تک کے نصاب میں ایس این سی منصوبے کے تحت ہونے والی تبدیلیوں بارے تفصیلات دستیاب ہو سکی ہیں۔ نصاب میں جس قدر مذہب کو شامل کیا گیا ہے اس کی مثال ماضی میں نہیں ملتی۔ اگر پاکستان میں مدرسہ نظام تعلیم کے دو بڑے اداروں، تنظیم المدارس اور رابطہ المدارس، کے ساتھ مجوزہ تبدیلیوں کا موازنہ کیا جائے تو ایک بار آپ کو دھچکا ضرور لگے گا۔
آئندہ سے اسکولوں میں مدرسوں سے بھی زیادہ رٹا بازی پر زور دیا جائے گا۔ اسکول ٹیچرز چونکہ مذہبی تعلیم نہیں دے سکتے اس لئے قاری حضرات اور حافظ ِقرآن حضرات کی ایک فوج ظفر موج کو اسکولوں میں تنخواہ دار ملازم کے طور پر تعینات کیا جائے گا۔ اس کا عمومی ماحول پر کیا اثر پڑے گا یا بچوں کی حفاظت کیسے ممکن بنائی جائے گی، اس بارے ابھی کچھ کہنا ممکن نہیں۔

مشترکہ نصاب تعلیم تین مفروضات کی بنیاد پر کیا جا رہا ہے مگر مندرجہ ذیل تین نکات ذہن نشین رہیں:

پہلی بات: یہ تصور بالکل غلط ہے کہ پاکستان میں اسکولوں کے مختلف نظاموں کی وجہ سے معیار تعلیم کا فرق پایا جاتا ہے۔ جغرافیہ، معاشرتی علوم یا سائنس جیسے سیکولر مضامین اور موضوعات سب ہی سکولوں میں پڑھائے جاتے ہیں۔ ترجیحات اور تفصیلات کا فرق ہو سکتا ہے مگر سب جگہ یہی پڑھایا جاتا ہے کہ دنیا میں سات بر اعظم ہیں اور ہائیڈروجن کے دو ایٹم آکسیجن کے ایک ایٹم کے ساتھ مل کر پانی بناتے ہیں۔

ان اسکولوں میں فرق اس بنیاد پر ہے کہ مختلف اسکولوں میں طریقہ تعلیم (ٹیچنگ میتھڈ)بھی مختلف ہیں اور طلبہ کی قابلیت جانچنے کا طریقہ بھی مختلف۔ اس کی ایک مثال یہ ہے کہ بچہ جب بورڈ کا امتحان دے گا تو اس سے ریاضی کے پرچے میں پوچھا جائے گا کہ فلاں کلیہ کس نے بنایا تھا۔ او لیول کے امتحان میں کہا جائے گا کہ فلاں کلیہ لگا کر سوال حل کرو۔ جدید دنیا میں طالب علم سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ کلئے کی مدد سے حل ڈھونڈے گا، کلئے کو رٹا نہیں لگائے گا۔

دوسری بات : یہ تصور بھی سراسر غلط ہے کہ بچوں کو مذہبی بنا دینے سے ایچی سن کالج اور محلے کے سرکاری اسکول کے طالب علم ایک ہی سطح پر آ جائیں گے۔ محمود و ایاز ایک ہی صف میں کھڑے ضرور ہوتے تھے مگر نماز کے بعدوہ رہتے آقا و غلام ہی تھے۔ اسی طرح غریب اور امیر اسکولوں کا فرق اس وقت تک ختم نہیں ہو گا جب تک سب اسکولوں میں اچھا انفرا سٹرکچر، معیاری کتب، تربیت یافتہ اساتذہ اور انٹرنیٹ کی سہولت دستیاب نہیں ہو گی۔ یہ وسائل کہاں سے پیدا ہوں گے، اس کا اندازہ آپ خود لگا لیجئے۔ پی ٹی آئی کی حکومت تو بہر حال دفاع کے علاوہ ہر شعبے کا بجٹ کم کر رہی ہے۔

تیسری بات: یہ تصور بھی انتہائی غلط ہے کہ جدید اسکول اور مدرسے کا فرق ختم کیا جا سکتا ہے۔ جدید تعلیم کی بنیاد ہی تنقیدی سوچ پر ہے۔ یہاں کامیابی یا ناکامی کا پیمانہ یہ ہے کہ طلبہ مسائل حل کر سکتے ہیں یا نہیں اور ان کے پاس دنیاوی علم ہے یا نہیں۔ مدرسے کا نصب العین اہم سہی مگر یہ اسکول سے بالکل مختلف ہوتا ہے۔ مدرسے میں طالب علم سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ مذہب پر عمل پیرا ہو گا اور اپنی آخرت سنوارنے پر توجہ دے گا لہذاٰ تنقیدی سوچ کو اہم نہیں سمجھا جاتا۔
یہ بات درست ہے کہ اب کچھ مدارس میں انگریزی، سائنس اور کمپیوٹر سائنس جیسے سیکولر مضامین پڑھائے جا رہے ہیں۔ مدرسوں نے یہ سلسلہ کافی دباؤ کے بعد شروع کیا۔ گیارہ ستمبر کے بعد مدارس پر سب کی نظر تھی کیونکہ مدارس کو دہشت گردی سے جوڑا جا رہا تھا۔

مشرف حکومت جو امریکہ کی بات پر دھیان دینے پر مجبور تھی، نے حکم دیا تھا کہ مدرسوں میں یہ مضامین پڑھائے جائیں۔ کچھ مدارس نے تو سرے سے انکار کر دیا البتہٰ بعض نے یہ سلسلہ شروع کر دیا۔ مدرسوں میں البتہٰ سیکولر اور مذہبی مضامین ایک ہی انداز میں پڑھائے جاتے ہیں: منطق تقریباََ غائب نظر آتی ہے جبکہ آمرانہ طریقہ تعلیم غالب رہتا ہے۔

پہلی سے پانچویں جماعت بارے ایس این سی دستاویز میں سیکولر مضامین پر بات تو کی گئی ہے مگر زیادہ تر انگریزی، جنرل نالج، جنرل سائنس، ریاضی اور معاشرتی علوم بارے بے معنی بڑ بڑ کے سوا کوئی ٹھوس بات نہیں کی گئی۔ ان منصوبوں پر عمل درآمد کے لئے علمی اور عملی وسائل درکار ہوں گے، وہ کیسے مہیا کئے جائیں گے۔ ۔ ۔ کوئی بات نہیں کی گئی۔

اسکول کے نصاب سے بھی بڑی تبدیلیاں ہونے جا رہی ہیں۔ حکومت ِپنجاب نے کالج اور یونیورسٹی کی سطح پر ناظرہ قرآن کو لازمی قرار دے دیا ہے۔ یہ امتحان پاس کئے بغیر کسی کو بی اے، بی ای، بی ایس سی، ایم اے، ایم ایس سی، ایم بی بی ایس، ایم فل یا پی ایچ کی ڈگری نہیں ملے گی۔

یہ شرط تو ضیا دور میں بھی نہیں لگائی گئی تھی۔ اَسی کی دہائی میں یونیورسٹی میں پروفیسر لگنے کے لئے امہات المومنین کے نام یا دعائے قنوت جیسی مشکل دعائیں یاد کرنا ہوتی تھیں مگر طلبہ یہ مراحل طے کئے بغیر ڈگری لے سکتے تھے۔ اب یہ اختیار بھی چلا گیا۔

ایران، بنگلہ دیش اور انڈیا کے طلبہ سے بھی کم صلاحیت رکھنے والے پاکستانی طلبہ سائنس اور ریاضی کے تمام عالمی مقابلوں میں بہت بری کارکردگی دکھاتے ہیں۔ جن کی کارکردگی اچھی ہوتی ہے، وہ اے لیول اور او لیول والے ہوتے ہیں۔ اس سے بھی پریشان کن بات یہ ہے کہ اپنا ما فی الضمیرنہ درست اردو میں بیان کر سکتے ہیں نہ انگریزی میں۔ کتابیں پڑھنا تو قصہئ پارینہ بن چکا۔

تحریک انصاف حکومت کی نئی پالیسی اس بارے مکمل طور پر خاموش ہے کہ طلبہ کی ہنر مندی میں کیسے اضافہ کیا جائے گا۔ ٹیکنیکل اور ووکیشنل کالجوں میں معیارِ تعلیم اس قدر پست ہے کہ نجی شعبہ جب کسی کو نوکری دیتا ہے تو نئے سرے سے ٹرینگ دیتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ نجی شعبے میں صنعتی ترقی نہ ہونے کے برابر ہے جبکہ پی آئی اے اور پاکستان اسٹیل ملز کا بیڑا غرق ہو چکا ہے۔ اسی طرح پاکستان کا خلائی پروگرام ناکام ہو چکا ہے جبکہ ایران نے حال ہی میں اپنا ایک عسکری سیارہ مدار میں چھوڑا ہے اور انڈیا مریخ پر پہنچنے والا ہے۔

اٹھارہویں ترمیم کا فائدہ اٹھاتے ہوئے صوبوں کو چاہئے کہ اس رجعتی منصوبے کو رد کر دیں جو اسلام آباد پر فی الوقت قابض رجعتی نظریہ دان لاگو کرنا چاہتے ہیں ورنہ پاکستان جنوبی ایشیا میں ایک مذاق بن کر رہ جائے گا اور عرب ملکوں سے بھی پیچھے رہ جائے گا۔

پاکستان کی بد ترین ناکامی یہ ہے کہ شہریوں کو وہ ہنر نہیں سکھائے گئے جو زندگی گزارنے کے لئے ضروری ہیں حالانکہ سب سے زیادہ اسی کی ضرورت تھی۔ ترقی کے لئے ضروری ہے کہ تعلیم کو ترجیح دی جائے۔ سیاسی فائدے اصل کرنا ترجیح نہیں ہونا چاہئے۔

Pervez Hoodbhoy

پرویز ہودبھائی کا شمار پاکستان کے چند گنے چنے عالمی شہرت یافتہ سائنسدانوں میں ہوتا ہے۔ اُن کا شعبہ نیوکلیئر فزکس ہے۔ وہ طویل عرصے تک قائد اعظم یونیورسٹی سے بھی وابستہ رہے ہیں۔