پاکستان

فاروق سلہریا روزنامہ جدوجہد کے شریک مدیر ہیں۔ گذشتہ پچیس سال سے شعبہ صحافت سے وابستہ ہیں۔ ماضی میں روزنامہ دی نیوز، دی نیشن، دی فرنٹئیر پوسٹ اور روزنامہ پاکستان میں کام کرنے کے علاوہ ہفت روزہ مزدور جدوجہد اور ویو پوائنٹ (آن لائن) کے مدیر بھی رہ چکے ہیں۔ اس وقت وہ بیکن ہاوس نیشنل یونیورسٹی میں اسسٹنٹ پروفیسر کے طور پر درس و تدریس سے وابستہ ہیں۔


پی ٹی آئی ظالموں کی مظلومیت کا اظہار ہے

ظالموں کی اس مظلومیت کے بہت سے فوائد بھی ہیں۔ اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہے کہ ان ظالموں کو پیپلز پارٹی، نواز لیگ، ایم کیو ایم (جب وہ ساتھ چھوڑ جائیں) کی چوریاں ڈاکے تو نظر آتے ہیں، اپنی چوریاں اور اپنے ڈاکے انہیں ان کا پیدائشی حق، عین شرعی اور حلال محسوس ہوتے ہیں۔ انہیں لگتا ہے کہ ان کی جائداد کے پیچھے کوئی جرم نہیں چھپا مگر سپریم کورٹ کے ایک جج کی نواز شریف بارے یہ بات بالکل درست ہے کہ:’Behind every big fortune, there is a big crime‘۔

جموں کشمیر: وزیر اعظم کی ’سکیورٹی میں خلل‘، صحافی بھارتی ایجنٹ قرار دے دیئے گئے

سیاسی و سماجی رہنماؤں، وکلا، صحافیوں، طالبعلم رہنماؤں اور ٹریڈ یونین رہنماؤں نے صحافیوں اور سیاسی کارکنوں کے خلاف بے بنیاد مقدمات قائم کرنے اور ہراساں کرنے کیلئے دی گئی حکومتی درخواست پر سخت تشویش کا اظہار کیا ہے۔ سوشل میڈیا کے مختلف پلیٹ فارمز پر صحافیوں اور سیاسی کارکنوں کو ہراساں کرنے کی مذمت کی جا رہی ہے اور مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ ترجمان وزیر اعظم کے خلاف کارروائی کی جائے۔

پاکستان میں مہنگائی کے سونامی اور عالمی مالیاتی اداروں کا کردار

حکومت یا ریاست کو فوری طور پر مالی ایمرجنسی نافذ کر کے ہر قسم کی پر تعیش درآمدات پر پابندی لگائے، کوالٹی اور قیمتوں کے کنٹرول کو یقینی بنائے، غریب عوام کے معاشی حقوق اور عزت نفس کا تحفظ کرے۔ امیروں پر ٹیکسوں کی شرح میں اضافہ کرے اور عوام کو چھوٹ دے۔

نادرا نے کورئیر سروس کا ٹھیکہ پاکستان پوسٹ کی بجائے ’ٹی سی ایس‘ کو کیوں دیا؟

یہ جاننے کے لئے میں ٹوکن مشین کے پاس آن کھڑا ہوا اور یہ دیکھ کر حیران رہ گیا کہ ایجنٹ ٹائپ لوگ وہاں سے اضافی ٹوکن لے کر اپنے پاس محفوظ رکھتے ہیں۔ بعد میں آنے والوں کو یہ ٹوکن نمبر فروخت کئے جاتے ہیں۔ اگر کسی ٹوکن نمبر کے لئے آواز پڑ بھی چکی ہو تو عملہ کی ملی بھگت سے اسے دوبارہ بھی موقع مل سکتا ہے۔ اس طرح نادرا کے دفتر میں جہاں عام شناختی کارڈ کی فیس 750 روپے ہے، وہاں 500 تک اضافی رشوت دینے سے معاملہ فوری حل ہو جاتا ہے۔

حکومت نہیں ریاست بحران کا شکار ہے

معاشی و سیاسی بحران کئی قسم کے سماجی بحرانوں کی شکل میں سامنے آ رہا ہے۔ بیگانگی بڑھ رہی ہے۔ تشدد اور جرائم میں اضافہ ہے۔ عدم برداشت ایک معمول ہے۔ سائنسی سوچوں کی جگہ توہمات، سازشی تھیوریاں، جادو ٹونے اور تعویز دھاگے کا استعمال اور بڑھ گیا ہے۔ میڈیا اور سوشل میڈیا کی پولیٹیکل اکانومی ایسی ہے کہ اس نے ان سماجی بحرانوں کو مزید گہرا کیا ہے۔ عوام کی اکثریت ایک ہیجان میں مبتلا ہے۔ محنت کش تو کیا، مڈل کلاس اور خوشحال لوگ بھی کسی امید کی بات نہیں کرتے۔ ہر کوئی مایوسی کی بات کر رہا ہے۔

بحریہ ماہانہ 7 ارب ناجائز ذرائع سے ہتھیاتا ہے: فائلوں کو لگے پہیوں کی کہانی

صرف لاہور، اسلام آباد اور راولپنڈی میں ملک ریاض کی نجی ہاؤسنگ سکیم بحریہ ٹاؤن میں مفاد عامہ کے لئے گورنمنٹ کے نام منتقل شدہ جگہ پر متعدد عمارات قائم ہیں، جن کا تمام تر کمرشل فائدہ سرکاری اہلکاروں کی ملی بھگت سے کروڑوں روپے ماہانہ کمایا جا رہا ہے۔ یہی عالم ان تمام سوسائٹیوں کا ہے، جن کے مالکان بے پناہ سیاسی، سماجی اور معاشی اثر و رسوخ کے حامل ہیں۔

آئی ایم ایف سے ہٹ کر معاشی بحالی کیلئے 7 اقدامات

(۱) چھوٹے کسانوں کے لئے نئی ٹیکنالوجی تا کہ وہ ہل چلا سکیں اور ڈرپ ٹیکنالوجی تا کہ فصلوں کو پانی کی فراہمی کو جدید بنایا جا سکے (۲) ٹنل فارمنگ تا کہ کنٹرولڈ ماحول میں آف سیزن اعلیٰ درجے کی سبزیاں بھی پیدا کی جا سکیں (۳) ایسی کھادیں جو متعلقہ زمین کے لئے سود مند ہوں (۴) انفا رمیشن ٹیکنالوجی کی بنیاد پر ایسے پلیٹ فارم بنائے جائیں جہاں یہ معلومات دستیاب ہوں کہ بر آمدات کے لئے کونسی مصنوعات دستیاب ہیں، اسی طرح ہر کسان بارے یہ معلومات دستیاب ہوں کہ وہ جو فصل پیدا کرتا ہے یا اس کی پیکنگ اور سٹوریج کا معیار عالمی ضابطوں کے مطابق ہے۔

ایک نہیں دو پاکستان: علی وزیر کیلئے بات دو قومی نظریہ سے بھی آگے نکل گئی

دوسری طرف سابق حکمران جماعت تحریک انصاف کی سرکردہ رہنما شیریں مزاری ہیں۔ جنہیں بظاہر غریب مزارعوں کی ہزاروں ایکڑ اراضی ہڑپ کرنے کے ایک خاندانی کرپشن کے مقدمہ میں اسلام آباد پولیس نے گرفتار کیا تھا۔ ناقدین اس گرفتاری کو فوج کو مسلسل تنقید کا نشانہ بنائے جانے کا رد عمل قرار دے رہے تھے۔ تاہم ان کیلئے رات گئے عدالت العالیہ کے نہ صرف دروازے کھولے گئے بلکہ انکی حفاظتی ضمانت منظور کرتے ہوئے انہیں رہا کرنے کا حکم بھی دیا گیا۔ انہوں نے رہائی کے بعد گرفتاری کا الزام شہباز شریف حکومت پر دھرا، تاہم ان کی وکیل اور بیٹی ایمان مزاری نے آرمی چیف قمر جاوید باجوہ کو مورد الزام ٹھہرایا اور ان کا ایک دھواں دار ویڈیو بیان چند ہی لمحوں میں سوشل میڈیا پر وائرل ہو گیا۔

لانگ مارچ ناکام مگر حکومت کی ناکامیاں جاری

اس قدر شدید بحران 1971ء کے بعد پہلی دفعہ درپیش ہے جو پچھلی سات دہائیوں کی عوام دشمن پالیسیوں کا مجموعہ ہے۔ بحران جس قدر شدید ہے، بحران کا حل بھی اتنے ہی ریڈیکل متبادل کا تقاضہ کرتا ہے۔ یہ متبادل ایک سوشلسٹ پلیٹ فارم کی شکل میں ہی سامنے آ سکتا ہے۔ یہ متبادل اس وقت عوامی شعور کا حصہ نہیں مگر بن ضرور سکتا ہے۔ سوشلسٹ قوتوں کو اس وقت سرگرمی دکھانا ہو گی۔ کوئی نیاتنظیمی ڈھانچہ تشکیل دینا ہو گا جو ملکی سطح پر موجود ہو۔ امکانات موجود ہیں۔ امکانات کو حقیقت کی شکل دینا ہی اس وقت بائیں بازو کا بھی اصل امتحان ہے۔