مزید پڑھیں...

’تیسری دنیا کے قرضوں کو منسوخ کیا جائے‘

اے پی ایم ڈی ڈی کی کوآرڈینیٹر لیڈی ناپیل نے کہا کہ ہماری حکومتیں لوگوں کی ضروریات کے مقابلے میں قرضوں کی کی ادائیگیوں پر زیادہ خرچ کرتی ہیں اور اب بھی قرض لینے کی دوڑ جاری رکھے ہوئے ہیں کیونکہ جی سیون ممالک قرضوں کی مالی معاونت اور قرضوں کی تخلیق کے حل کو آگے بڑھا رہے ہیں۔

جنسی ہراسانی، فیسوں میں اضافے کے خلاف 6 طلبہ تنظیموں کا اتحاد

آر ایس ایف کے رہنما اور الائنس کے کنونیئر نواب چانڈیو نے کہا کہ ملک میں موجودہ طبقاتی نظام تعلیم مکمل طو رپر ناکام ہو چکا ہے اور یہ طلبہ دشمن اور تعلیم دشمن فیصلوں سے بخوبی عیاں ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تعلیم کے شعبے کو مسلسل نظر انداز کیا گیا اورحکمرانو ں نے اپنی مراعات میں اضافہ کیا۔

کھاد کی قیمتوں میں ریکارڈ اضافہ: ملک میں غذائی بحران کا شدید خطرہ

’ڈان‘ کے مطابق مارکیٹ کے رجحانات کے مطابق ڈائی امونیم فاسفیٹ (ڈی پی اے) فی بوری 11500 سے 12500 روپے کے درمیان فروخت ہو رہی ہے۔ سلفیٹ آف پوٹاش (ایس او پی) کا ایک تھیلا 16000 روپے تک پہنچ گیا ہے اور موریٹ آف پوٹاش (ایم او پی) کی قیمت 1100 روپے فی بوری تک پہنچ گئی ہے۔ یوریا اگرچہ طلب سے باہر ہے پھر بھی 2200 روپے فی بیگ ہے۔

ہاؤسنگ سوسائٹیاں قومی خزانے کو اربوں کا نقصان پہنچا رہی ہیں (تیسرا حصہ)

پاکستان کے رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں دولت کی ریل پیل اور سٹے بازی کا آغاز تب ہوا، جب راولپنڈی میں ایک پرائیویٹ ڈویلپر نے ڈی ایچ اے کی طرز پر ایک نئی بستی بسانے کا اعلان کیا۔ اس بستی کا نام اس ڈویلپر نے بری فوج کے پراجیکٹ ڈی ایچ اے کی طرح، پاکستان نیوی کی اجازت سے بحریہ ٹاؤن رکھا۔

ایران میں مزدور بغاوت کے راستے پر: 1 سال میں 4,122 ہڑتالیں، مظاہرے

ایران میں آئینی طور پر واضح اجازت کے باوجود عراق کے ساتھ جنگ (1980-1988ء) کے بعد سے ملازمین کی ہڑتالیں اور مظاہرے سختی سے ممنوع ہیں۔ ان پابندیوں کے باوجود 1 مئی 2021ء سے 1 مئی 2022ء کے درمیان مزدوروں، اساتذہ، ٹاؤن ہال کے عملے، پنشنروں، ہسپتال کے عملے، کسانوں اور بیروزگار نوجوانوں وغیرہ کی طرف سے 4122 ہڑتالیں اور احتجاجی کارروائیاں ہوئی ہیں۔ یہ بعض اوقات اساتذہ کی جدوجہد کے سلسلے میں درجنوں یا حتیٰ کہ سینکڑوں شہروں میں بیک وقت منظم کئے جانے والے قومی اقدامات تھے، جو اس حکومت کی 43 سالہ تاریخ میں پہلے کبھی نہیں دیکھے گئے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ان جدوجہدوں کو منظم کرنے میں دسیوں ہزار کارکن شامل ہیں۔

محبت کا حق سب کے لئے

جمعہ اور ہفتہ کی درمیانی رات کو ہم جنس پرستوں کے پسندیدہ پب ”لندن“ کے باہر ایک شخص نے اندھادھند فائرنگ کر کے دو افراد کو قتل اور اکیس افراد کو زخمی کر دیا۔ تا دم تحریر (ہفتے کی شام) زخمیوں میں گیارہ کی حالت تشویشناک ہے۔ پولیس نے ایک بیالیس سالہ ایرانی نژاد شخص کو گرفتار کرنے کی تصدیق کی ہے اور پولیس ہی کے کہنے پر سکیورٹی کو مدنظر رکھتے ہوئے ہفتہ پچیس جون کے روز ہونے والی پرائڈ پریڈ اور دیگر تقریبات منسوخ کر دی گئیں ہیں۔

مزدوروں کی کم از کم تنخواہ 40,000 مقرر کی جائے

مقررین نے کہا کہ مزدوروں کی مسلسل محنت اور کاوشوں کی بدولت ہی پاکستان کی ٹیکسٹائل، گارمنٹس، پاورلومز، سائزنگ، بھٹہ و دیگر انڈسٹری ترقی کر رہی ہے جب مزدور ہی بے روزگار اور بھوکا ہو گا تو پاکستان کی ترقی کیسے ممکن ہو سکتی ہے؟

زلزلے کے نام پر’کافروں‘ سے بھیک مانگتے طالبان

ساڑھے تین سو افراد ہیں پاکستان کی قومی اسمبلی میں۔ صرف ’غدار‘ محسن داوڑ کو خیال آیا افغان زلزلے کے متاثرین کا۔ امہ کے غم میں گھلنے والے باقی کسی ’محب وطن‘ رکن اسمبلی کو شائد معلوم بھی نہ ہو کہ پکتیکا میں ہزار مزید افراد سٹریٹیجک ڈیتھ کا شکار ہو گئے ہیں۔

راجہ پرویز اسد قیصر اشرف

تین دن قبل علی وزیر نے جب جناح ہسپتال میں بھوک ہڑتال کر دی تو زمین پر براجمان علی وزیر کی تصویر وائرل ہو گئی۔ یہ ممکن نہیں کہ وزیر اعظم شہباز شریف تک یہ تصویر نہ پہنچی ہو۔ وہ بہادر ٹرک ڈرائیور کی وائرل ویڈیو کا نوٹس لے سکتے ہیں تو جناح ہسپتال میں ہونے والی بھوک ہڑتال سے غفلت ممکن نہیں۔ اس کے باوجود کوئی رد عمل سامنے نہیں آیا۔ اتنا سا وعدہ بھی نہیں کیا گیا جتنا بلوچوں سے کیا گیا تھا: ”لا پتہ افراد بارے متعلقہ محکمے سے بات کروں گا“۔