طنز و مزاح

فاروق سلہریا روزنامہ جدوجہد کے شریک مدیر ہیں۔ گذشتہ پچیس سال سے شعبہ صحافت سے وابستہ ہیں۔ ماضی میں روزنامہ دی نیوز، دی نیشن، دی فرنٹئیر پوسٹ اور روزنامہ پاکستان میں کام کرنے کے علاوہ ہفت روزہ مزدور جدوجہد اور ویو پوائنٹ (آن لائن) کے مدیر بھی رہ چکے ہیں۔ اس وقت وہ بیکن ہاوس نیشنل یونیورسٹی میں اسسٹنٹ پروفیسر کے طور پر درس و تدریس سے وابستہ ہیں۔


خبردار! ہیپی نیو ایئر کہنا بھی حرام ہے

ہم پھر سے سال کے اس موڑ پر آ پہنچے ہیں جہاں جانے انجانے میں مسلمانوں سے نعوذباللہ گناہ کبیرہ سرزد ہو ہی جاتا ہے۔ یہاں ’سال‘سے مراد وہ جال ہے جو اہل کفر نے بڑی گہری سازش کے تحت بچھایا ہے تا کہ ایک ہی ہفتے میں دو دفعہ مسلمانوں سے تدبیرانہ شرک کرایا جائے اور انھیں پتہ بھی نہ چلے۔

انشااللہ! اسلام ورلڈ کپ جیتنے والا پہلا مذہب بننے جا رہا ہے

یقینا اسلامی فتوحات کی آنے والی ناگزیر لہر کے لئے ہی پاکستان کرکٹ نے تبلیغی جماعت کا رخ کیا تھا۔ جن احمقوں کا پھر بھی یہ پوچھنا ہے کہ یہ اسلام کے کونسی فقہ کی کامیابیاں ہیں ان سے گزارش ہے کہ ایسے فرقہ وارانہ مسائل ہم پی ایس ایل میں ٹیموں کو فرقوں سے منسلک کر کے حل کر لیں گے: مثلاً وہابی یونائیٹڈ، دیوبندی گلیڈی ایٹرز، بریلوی قلندرز وغیرہ۔ آپ تو بس اب اگلے ورلڈ کپ کی تیاری کریں جس میں پاکستان ٹاس جیت کر پہلے جزیہ لینے کا فیصلہ کیا کرے گا۔

عورت دشمن قبائلی ٹولے کے ہاتھ بیعت کر لینی چاہئے

امید ہے آپ کے تمام خدشات اب تک دور ہو چکے ہوں گے۔ اگر ابھی بھی کوئی شکوک و شبہات ہیں تو میں بس یہی کہوں گا کہ آپ سعودی ولی عہد کی باتوں میں نہ آئیں اور صرف زمینی حقائق پرغور کریں۔ سعودی عرب اتنا ہی شریعت پسند اور عورت دشمن ہے جتنا وہ ہمیشہ سے آل سعود کے ما تحت رہا ہے لہٰذا ہمیں بغیر کسی ہچکچاہٹ کے محمد بن سلمان کے ہاتھ پر ویسے ہی بیعت کر لینی چاہئے جیسے ان کے آباؤاجداد کے ہاتھوں پر کرتے آئے ہیں۔

چندہ برائے نائٹ کلب

یہاں پر واضح ہو جائے کہ چونکہ کاوش اصلاح پسند بیانئے کو فروغ دینے کی ہے تو پراجیکٹ میں فرقہ واریت کی بالکل گنجائش نہیں ہو گی اور فقہ کی بنیاد پر چندہ اکھٹا کر کے الگ الگ منسلک کو اپنا اپنا علیحدہ نائٹ کلب بنانے کی سہولت ہر گز نہیں دی جائے گی۔ جماعت الڈسکو تمام مسلمانوں اور امت انسانی کی جماعت ہو گی۔