مزید پڑھیں...

اعلان تعطیلات: عید الاضحی کے بعد اگلا شمارہ 24 جون کو شائع ہو گا

عید الاضحی کی تعطیلات کے سلسلے میں ’روزنامہ جدوجہد‘ 23 جون تک آن لائن پوسٹ نہیں کیا جائے گا۔ عید کی چھٹیوں کے بعد،اگلا شمارہ 24 جون (بروزپیر)شائع ہو گا۔
ادارتی بورڈ تمام قارئین کو عید مبارک پیش کرنے کے علاوہ ’روز نامہ جدوجہد‘ کی مسلسل حوصلہ افزائی اور مدد کے لئے بھی شکریہ ادا کرنا چاہتا ہے۔
یہ عید ایک ایسے موقع پر منائی جا رہی ہے کہ جب غزہ میں قتل عام جاری ہے جبکہ پاکستان کے محنت کش اور سفید پوش طبقے پر سر مایہ دار حکومت کی جانب سے،تازہ بجٹ میں،ناقابل برداشت نئے ٹیکس لاگو کر دئیے گئے ہیں۔سچ تو یہ ہے کہ پاکستان کی اکثریت کے لئے عید جیسا کوئی تہوار منانا ممکن ہی نہیں رہ گیا۔
جب تک دنیا بھر سے جنگوں، نا انصافیوں اور نا برابری کا خاتمہ نہیں ہوتا، محنت کش کوئی حقیقی خوشی نہیں منا سکتے۔ ’روزنامہ جدوجہد‘ ایک ایسے مستقبل کے لئے جدوجہد کا نام ہے جس میں دنیا بھر کے انسان،سر مائے کی آمریت سے نجات پا کر،حقیقی خوشیوں سے بھر پور زندگی گزار سکیں گے۔

غزہ سے یکجہتی: بنگلہ دیش میں کوکا کولا کی سیل 23 فیصد کم

بنگلہ دیش میں کوکا کولا کا بائیکاٹ کافی موثر ہے۔ الجزیرہ کی ایک خبر کے مطابق کوکا کولا کی سیل میں 23 فیصد کمی آئی ہے۔ کوکا کولا نے اس صورت حال سے نپٹنے کے لئے ایک اشتہار بنوایا جس میں یہ پیغام دینے کی کوشش کی کہ کوکا کولا اسرائیل کا حامی نہیں۔اس اشتہار کے خلاف بھی بنگلہ دیش میں زبردست رد عمل ہوا۔ جن دو معروف اداکاروں نے اس اشتہار میں کام کیا،انہوں نے اس اشتہار میں کام کرنے پر معافی مانگی ہے۔

کرکٹ کو تبلیغ سے علیحدہ کیا جائے

تبلیغی جماعت یا کسی بھی ایک سیاسی و مذہبی گروہ کی کرکٹ پر اجارہ داری کا واضح مطلب ہے کہ اقربا پروری سے کام لیا جائے گا۔ میرٹ پر تعیناتی نہیں ہو گی۔ اب حالت یہ ہے کہ کرکٹ ٹیم کا مینیجر، کوچ یا سلیکشن کمیٹی کا رکن اپنی تعیناتی کے لئے طارق جمیل کے اشارہ ابرو کا محتاج ہو چکا ہے۔ اسی طرح، اگر کوئی کرکٹر طارق جمیل کا چیلا نہ بنے، اس کی ٹیم میں جگہ نہیں بنتی۔ ماضی میں بعض کرکٹرز اس کا دبے لفظوں میں اظہار کر چکے ہیں۔

کیا عمران خان کو دوسری اننگ کھیلنے دی جائے گی؟

عمران خان میں کسی قسم کی خوش فہمی نہیں پالنی چاہئے۔ عمران خان کلین شیو جماعت اسلامی ہے۔ تحریک انصاف مزدور دشمن،عورت دشمن سیاسی مظہر ہے۔ اس کا لیکن یہ مطلب بھی نہیں کہ فوج کی حمایت کی جائے۔ خوش قسمتی سے ملک میں بائیں بازو کا کوئی گروہ بھی اس نقطہ نظر سے اختلاف کرتا دکھائی نہیں دیتا۔
دوم، فوج اور تحریک انصاف کی لڑائی ابھی چلے گی۔ اگر کسی موقع پر یہ تضاد حل بھی ہوا تو ملک کو درپیش معاشی و سیاسی بحران حل نہیں ہو گا۔ بائیں بازو کو اپنا کام جاری رکھنا ہو گا۔یہ الگ بات ہے کہ بائیں بازو کے بعض حلقے اس سمت میں گامزن نہیں جس سمت میں انہیں جانا چاہئے۔ اس ضمن میں چند گزارشات یہاں پیش کی گئی تھیں۔

کیا گیلیلیو یا ڈارون کو غلط ماننے سے کوئی فرق پڑتا ہے؟

کسٹوفر کولمبس کے بارے میں ہمیں بچپن میں ہی پتہ چل جاتا ہے کہ وہ ہندوستان پہنچنا چاہتا تھا لیکن امریکہ کی طرف جا نکلا۔ یہ بات نہیں بتائی جاتی کہ کولمبس نے جو سفر کی منصوبہ بندی کی تھی اس کی بنیاد یہ سائنسی نقطہ تھا کہ زمین گول ہے۔
بات یوں ہے کہ کولمبس سے قبل بھی یورپ کے مہم جو،جنوبی ایشیا اورمشرقی ایشیا کی جانب جانے کی کوشش کر چکے تھے۔ ان کے سفر نامے اس بات کا ثبوت تھے کہ جس سمندری راستے سے وہ ایشیا جانے کی کوشش کر تے ہیں،وہ بہت لمبا ہے۔

پاکستان کسان رابطہ کمیٹی کا جی 7 رہنماؤں سے کلائمیٹ فنانس کی ادائیگی کا مطالبہ

پاکستان کسان رابطہ کمیٹی، لیبر ایجوکیشن فائونڈیشن اور کروفٹر فاؤنڈیشن نے امریکن کونصلیٹ اور لاہور پریس کلب کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا اور مطالبہ کیا کہ جی سیون ممالک کلائمیٹ فنانس کی ادائیگی کریں۔ یہ احتجاج 13 جون کو ہونے والے 50 ویں جی 7 سربراہ اجلاس کے جواب میں منعقد کیا گیا تھا۔

جموں کشمیر: پولیس کی موجودگی میں تشدد کا نشانہ بننے والے ہی گرفتار کر لئے گئے

پاکستانی زیر انتظام جموں کشمیر کے وزیر حکومت فہیم ربانی کے قافلے میں شریک ان کے حامیوں کے تشدد کا نشانہ بننے والے سیاسی رہنماؤں کے خلاف انسداد دہشت گردی کی مقدمات درج کر کے انہیں گرفتار کر لیا گیا ہے۔ تاہم حملہ آوروں کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے۔

شاعر احمد فرہاد راڑہ جیل منتقل، اسلام آباد ہائی کورٹ نے لاپتہ قرار دیکر کیس نمٹا دیا

شاعر فرہاد علی کو جبری لاپتہ/ گمشدہ قرار دیا جاتا ہے تا وقتیکہ وہ اپنے گھر نہ پہنچ جائیں۔فرہاد علی جب اپنے گھر پہنچے تو تفتیشی افسر قانونی طور پر پابند ہے کہ وہ ان کا 164 کا بیان ریکارڈ کریں۔اسلام آباد ہائیکورٹ میں زیر سماعت تمام جبری گمشدگی کے مقدمات کو یکجا کر کے بڑے بینچ کے سامنے تجویز کرنے سے متعلق عدالت رجسٹرار آفس کو حکم دیتی ہے کہ وہ تمام مقدمات کو چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ کے سامنے پیش کریں تاکہ وہ انتظامی اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے بڑی بینچ تشکیل کریں۔

موسیٰ خان کا قتل: خون جو کوچہ و بازار میں آ نکلا ہے!

موسیٰ خان کو خراج تعلیمی اداروں کے حبس زدہ ماحول میں اس بوسیدہ اور گلے سڑے سرمایہ دارانہ تعلیمی و سماجی نظام کا انقلابی متبادل پیش کرنے والی سیاسی، نظریاتی اور ثقافتی سرگرمیوں کے ذریعے ہی پیش کیا جا سکتا ہے۔ جس کے لیے اسی انتظامیہ کا مقابلہ کرنا ہو گا۔ رنگوں کی ہولیوں، آلات موسیقی کی مدھر آوازوں اورزندگی کو زندگانی کا احساس بخشنے والے رقص کے ساتھ ساتھ سوشلسٹ فلسفے، معاشیات، تاریخ، ادب جیسے موضوعات پر مبنی سٹڈی سرکل، طلبہ حقوق کی بازیابی کی سیاست اور طلبہ یونین کی بحالی کی تحریک ہی ملک بھر کے تعلیمی اداروں کی کیمپس لائف میں رنگ بھر سکتی ہے۔ ایک بہتر معاشرے اور نئی دنیا کی تعمیر کی یہی طبقاتی جدوجہد طلبہ کو ان سے چھینی گئی امنگیں اور خواب لوٹا سکتی ہے اور ان کی زندگیوں کو زندگی سے بڑے مقصد اور نصب العین سے آراستہ کر سکتی ہے۔

انسان اور ماحول کے درمیان تعلق اور پیچیدگیاں

انسان ایک سماجی جانوار ہے اور زمین پر موجود باقی نسلوں کی طرح ہی ایک نسل ہے اور فطرت کے قوانین کے مطابق ہی ارتقائی عمل کا حصہ ہے۔ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آخر وہ کیا وجوہات ہیں کہ انسان جو فطرت کا ہی ایک مادی اظہار ہے اور اس فطرت کے ایک جزو زمین کے اجتماعی حالات (ماحول) کے مابین براہ راست تعلق میں ہے ،یعنی اس پرانحصار بھی کرتاہے اور اس میں گنجائش بھی نکال رہا ہے۔ آخر ہم براہ راست صرف اس کا ہی ماحول کے ساتھ تعلق کیوں بیان کر رہے ہیں ۔یہ تمام وہ سوالات ہیں جو فطرت اور اس کے ماحول کا براہ راست انسان کے ساتھ تعلق اور ان کے تعلق میں موجود پیچیدگیوں کی گتھی کو سلجھائیں گے۔ آئیں ہم ایک سفر پر چلیں جہاں ہم تجربہ اور مشاہدہ کی مثالوں کے نتیجہ میں ان تمام تر سوالات کا حل دیکھنے کی کوشش کر سکیں۔