شاعری

رنج کاساماں بھی وہی…

قیصر عباس

دریا بھی وہی، پیاس کا امکاں بھی وہی ہے
موسم بھی وہی، دشت کا داماں بھی وہی ہے

بدلے ہیں کتابوں کے سرورق ہی یارو
ورنہ تو ہر اک باب کا عنواں بھی وہی ہے

چہرے ہی توبدلے ہیں مہ و سال میں اپنے
وحشت بھی وہی، رنج کا ساماں بھی وہی ہے

لفظوں کی وہی کاٹ، وہی طرز ادا ہے
لکھی ہوئی تقریر کا عنواں بھی وہی ہے

احباب کے تیور ہی تو بدلے ہیں وگرنہ
اک عمرہوئی حلقہ یاراں بھی وہی ہے

قیصرؔ نہیں بدلے ہیں شب و روز ہمارے
منصف بھی وہی، وقت کا یزداں بھی وہی ہے

Qaisar Abbas

ڈاکٹر قیصرعباس روزنامہ جدوجہد کی مجلس ادارت کے رکن ہیں۔ وہ پنجاب یونیورسٹی  سے ایم اے صحافت کے بعد  پاکستان میں پی ٹی وی کے نیوزپروڈیوسر رہے۔ جنرل ضیا کے دور میں امریکہ آ ئے اور پی ایچ ڈی کی۔ کئی یونیورسٹیوں میں پروفیسر، اسسٹنٹ ڈین اور ڈائریکٹر کی حیثیت سے کام کرچکے ہیں۔ آج کل سدرن میتھوڈسٹ یونیورسٹی میں ایمبری ہیومن رائٹس پروگرام کے ایڈوائزر ہیں۔