دنیا

[molongui_author_box]

صنف: حقوق پر حملے اور ردِعمل

ہمارے لیے یہ بہت اہم ہے کہ محنت کش خواتین، حقوقِ نسواں اور دوسری صنفوں کے حقوق کی جدوجہد میں مداخلت کر یں تاکہ ان تحریکوں کو آگے بڑھایا جا سکے اور اپنی قوتوں کی تعمیر کو بھی مستحکم کیا جا سکے۔ ایک ریڈیکل نوجوان ہراول دستہ ان تحریکوں کا حصہ ہے جو اس نظام کے اداروں اور جماعتوں پر یقین نہیں رکھتا اور انقلابی نظریات کو جذب کرنے کے لیے تیار ہے۔

’کوپ 28‘ اور ”ماحول دوست سرمایہ داری“ کا فریب

2023ء میں عالمی سطح پر موسمیاتی تبدیلی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے اور کرہ ارض کا اوسط درجہ حرارت صنعتی عہد سے قبل کی سطح سے تقریباً 1.5 ڈگری سینٹی گریڈ زیادہ تک پہنچ گیا۔ 2023ء کے دوران اوسط عالمی درجہ حرارت پچھلے 100,000 سالوں میں کسی بھی وقت سے زیادہ تھا۔

طالبان پاکستان کے ساتھ وہی کر رہے ہیں جو اسلام آباد کابل کے ساتھ کرتا تھا

یہ کاروائی پاکستانی افواج پر ایک دہشت گرد حملے کے بعد کی گئی جس میں لیفٹنٹ کرنل اور ایک کپتان سمیت سات اہل کار جان سے گئے۔ معروف صحافی عمر چیمہ نے اپنے یو ٹیوب چینل پر بتایا کہ ایک اہل کار کا تعلق جہلم کے علاقے ٹمن سے تھا۔ جس دن فوجی افسر کا جنازہ ہوا، اسی روز اسی گاوں کے ایک اور شخص کا جنازہ تھا جس کا تعلق سپاہ صحابہ سے تھا۔ اس شخص نے ایک پولیس اہل کار کو قتل کیا تھا،جس کے بعد وہ جیل میں سزا کاٹ رہا تھااور جیل میں ہی ہلاک ہو گیا۔ٹی ٹی پی تب تک محفوظ رہے گی جب تک سپاہ صحابہ کو ریاستی سر پرستی میسر ہے۔

انقلابی رجحانات: محنت کشوں اور عوام کی پیش قدمی اور بائیں بازو کے لیے گنجائش

جس طرح انتہائی دائیں بازو کے ابھار سے ظاہر ہونے والے خطرے کو معمولی سمجھنا ایک غلطی ہو گی اسی طرح محنت کشوں اور وسیع تر عوام کے بڑھتے ہوئے ابھار سے انکار کرنا بھی بہت بڑی بھول ہو گی۔ یہ تحرک کئی برسوں سے جاری ہے اور 2023ء میں ایک جست کے ساتھ امریکہ اور یورپ کی طاقتور مزدور تحریک اس میں شامل ہوئی ہے۔ ہمیں اس میں فلسطینی مزاحمت کو بھی شامل کرنا چاہیے جس نے پورے مشرق وسطیٰ میں سامراج کے منصوبوں کو غیریقینی سے دوچار کر دیا ہے۔

انتہائی دائیں بازو کا ابھار اور اس کیساتھ کیسے لڑا جائے

2022ء کے آخر اور 2023ء میں دائیں اور انتہائی دائیں بازو نے خاص طور پر یورپ میں نئی انتخابی فتوحات حاصل کی ہیں۔ سویڈن میں ماڈریٹ پارٹی (دائیں بازو) اور سویڈن ڈیموکریٹس (انتہائی دائیں بازو) نے سوشل ڈیموکریسی کے بعد دوسرے اور تیسرے نمبر پر آ کر حکومتی اتحاد بنایا۔ فن لینڈ میں نیشنل کولیشن (دائیں بازو) نے پارلیمانی انتخابات میں کامیابی حاصل کی جس کی حمایت پارٹی آف فنز (انتہائی دائیں بازو) نے کی اور دو دیگر قوتوں کے ساتھ مل کر حکومت بنائی۔

حکمرانی کا بحران

گہرے بحران کے حالات میں بر سر اقتدار آنے والی بورژوا اور مفاہمت پسند سیاسی قیادتیں کٹوتیوں کی انتہائی جارحانہ پالیسیاں لاگو کرتی ہیں جن سے محنت کش عوام کا معیار زندگی ناقابل برداشت سطح تک گر جاتا ہے۔ اس سے روایتی بورژوا پارٹیاں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو رہی ہیں، نئے رجحانات کی تشکیل اوران کے اقتدار کے تیر رفتار تجربے ہو رہے ہیں، حکومتیں گر رہی ہیں اور نئے سیاسی عوامل ابھر رہے ہیں۔

فلسطین: عالمی صورتحال کا کلیدی پہلو

سامراجی طاقتیں اسرائیل کی حمایت کرتی ہیں۔ امریکہ اس حمایت میں پیش پیش ہے اور ساتھ ہی اس فسطائی نیتن یاہو پر کنٹرول ر کھنے کی کوشش بھی کر رہا ہے جس نے غزہ پر بمباری جاری رکھتے ہوئے جنوبی لبنان پر بھی حملہ کیا ہے اور بحران کو باقی ماندہ مشرق وسطیٰ تک پھیلاتا جا رہا ہے۔حالیہ تنازعے سے قبل ہی اسرائیل میں عدالتی اصلاحات کے سوال پر ایک گہری تقسیم پائی جا رہی تھی اور مسلح تصادم ختم ہونے پر نیتن یاہو کے اقتدار میں رہنے کا امکان کم ہی ہے۔

کلونیل ازم: 120 سالہ انگریز دور میں 31 قحط پڑے، 2 ہزار سال میں 17

گو کلونیل ازم سے قبل ہندوستان میں کوئی جمہوریت نہ تھی، لیکن جان لیوا قحط کم ہی پڑے۔ مغلیہ دور میں شائد ہی قحط پڑا ہوجس نے لاکھوں تو کیا ہزاروں لوگوں کی جان لے لی ہو۔ اس کی ایک وجہ یہ تھی کہ اکبر سے لے کر اورنگزیب تک، مغلیہ عہد میں غذائی اجناس کی برآمد پر پابندی تھی، قیمتوں پر نظر رکھی جاتی تھی جبکہ خشک سالی کے ادوار میں مفت خوراک بانٹی جاتی تھی جس کے لئے غلہ ذخیرہ کیا جاتا تھا۔ اورنگرزیب کے عہد میں خشک سالی نے لگ بھگ دو سال کے لئے سلطنت کو گھیر لیا۔ اورنگزیب نے سرکاری خزانے کے منہ کھول دئے۔ غریبوں کو تو مفت خوراک فراہم کی گئی(یہ اس حکمران کا ذکر ہے جسے بعض افراد کی جانب سے مغلیہ سلطنت کے زوال کا سبب بھی قرار دیا جا تاہے)۔

آسکرز میں سیاست

ٹھیک ہے، یقینا اس سب کا بنیادی مقصد پیسہ ہے۔ امریکی فلمیں عالمی فلمی منڈی اور آسکرز پر حاوی ہیں۔ اکیڈمی آف موشن پکچر آرٹس اینڈ سائنسز کی جانب سے پیش کیے جانے والے ایوارڈز صنعت میں مالی اور فنکارانہ کامیابی کے عروج کی نمائندگی کرتے ہیں۔ اکیلے ’باربی‘نے ایک ایسی صنعت میں تقریباً 1.5 ارب ڈالر کمائے، جو سینکڑوں ارب ڈالر کماتی ہے۔ پھر یہ فیشن کے بارے میں بھی ہے،جب خواتین ریڈ کارپٹ پر اپنے شاندار گاؤن دکھاتی ہیں اورجب مرد اپنے ایک جیسے ٹیکسیڈوزمیں پینگوئن کی طرح پریڈ کرتے ہیں۔ تاہم رواں سال پہلے سے زیادہ یہ تقریب نہ صرف ایک شاندار تماشا تھی، بلکہ خاص طور پر ایک سیاسی تقریب بھی تھی۔

یوکرائن جنگ کے دو سال

2022ء میں شروع ہونے والی یوکرائن جنگ سامراجی کشیدگی کا مرکز (Epicenter) تھی۔ دو سال بعد آج یہ لڑائی تعطل کا شکار ہو چکی ہے۔ یوکرائنی دارالحکومت کیؤ پر قبضہ کرنے اور وہاں ایک کٹھ پتلی حکومت قائم کرنے کے ابتدائی منصوبے میں ناکامی کے بعد پیوٹن روس کی سرحد سے متصل یوکرائن کے 20 فیصد علاقے پر اپنی گرفت مضبوط کرنے میں مصروف ہے۔ یوکرائن کی مزاحمت، جو روسی پیش قدمی روکنے میں کامیاب رہی تھی، وقت گزرنے کے ساتھ اب کمزور پڑ رہی ہے اور زیلنسکی حکومت کی جانب سے بہت زیادہ تشہیر کردہ جوابی حملے میں بھی کوئی خاص کامیابی حاصل نہیں ہوئی۔