مارکسی تعلیم


مارکسزم اور فیض

انسانی زندگی کے بہت ابتدائی دور میں معاشرہ کی تنظیم اشتراکیت کے اصولوں پر قائم تھی۔ سبھی مل جل کر شکار کرتے۔ جنگل سے پھل وغیرہ اکٹھے کرتے اور بانٹ کر کھا پی لیتے جو کچھ تھا وہ سب کا تھا اور سب کے لئے تھا۔ رفتہ رفتہ کھیتی باڑی شروع ہوئی۔ مویشی پالے گئے۔ روزمرہ کی ضرورتوں سے زیادہ چیزیں پیدا ہوئیں تو کچھ طاقتور اور ہوشیار لوگوں نے صرف اپنے لئے ذخیرہ کرنا شروع کیا اور چیزوں کا تبادلہ کرنا شروع کیا۔ اس عمل نے بڑھ کر ذاتی ملکیت کو رواج دیا۔ برابری کی جگہ اونچ نیچ نے لے لی جو بتدریج غلامی، جاگیرداری، سرمایہ داری تک پہنچی۔

اشتراکیت میں ہی بقا ہے!

سب مل جل کر رہتے، مل کر شکار کرتے اور مل کر زندگی گزارنے کے باقی اقدامات بھی کرتے تھے۔ اس معاشرے میں کوئی حکمران طبقہ بھی نہ تھا۔

تین ورلڈ آرڈرز: ایک جائزہ

ماہرین سیاسیات کرۂ ارض کی کل یا اوسط سیاست کو تین ادوار یا آرڈرز میں تقسیم کر کے تجزیات کرتے ہیں۔ سرفہرست زور بازو (فوجی طاقت) کے ذریعہ سے حاصل ہونے والی سیاسی قوت یا حاکمیت کا دور، ٹیکنالوجی کی قوت سے حاصل حاکمیت کا دور اور تیسرے نمبر پر سرمائے کے زور پر حاکمیت کا دور۔

مارکسی تنقید کا طریقہ کار

تنقید سے عمومی طور پر مراد لی جاتی ہے مخالفت یا اختلاف رائے۔ حقیقت یہ ہے کہ آپ اتفاق رائے کی شکل میں بھی تنقیدیت کا اظہار کر سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر اگر کوئی مدلل بات کر رہا ہے تو آپ دلیل سے اتفاق کر کے تنقیدی روئیے کا اظہار کریں گے۔