خبریں/تبصرے

ہم فلسطین کے ساتھ کھڑے ہیں: اروندھتی رائے، اعجاز احمد، یوسف تاریگامی، نصیر الدین شاہ اور دیگر کا بیان

لاہور (جدوجہد نیوز) بھارت کے ترقی پسند مصنفین، اساتذہ، سیاستدانوں اور اداکاروں نے کہا ہے کہ ہم فلسطین کے ساتھ کھڑے ہیں۔ اعجاز احمد، اروندھتی رائے، گیتا ہریہارن، محمد یوسف تاریگامی، نصیرالدین شاہ، نینتارا سہگل، پربھات پٹنائک، رتنا پاٹھک شاہ، سبھاشنی علی، سدھنوا دیش پانڈے اور وجئے پرشاد کی جانب سے جاری کئے گئے مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ 1948ء سے اسرائیل نے فلسطینیوں کو ان کی سرزمین سے مٹانے اور فلسطینیوں کے آبائی وطن کے امکانات کو مٹانے کی کوشش کی ہے۔ اسی وجہ سے، شامی ماہرتعلیم کنسٹنٹاین زیورائک نے اسی سال ”مناالناکبہ“ (تباہی) کے نام سے ایک کتاب شائع کی۔ یہ ’تباہی‘ فلسطینیوں کو ان کے گھروں سے بے دخل کرنا تھا، جس کے بعد سے وہ اسرائیل کے اندر موجود فلسطینیوں کے لئے فرقہ وارانہ حالات، مشرقی یروشلم، غزہ اور مغربی کنارے میں مقیم فلسطینیوں کی جائیدادوں پر قبضے اور جلاوطنی میں جانے والے فلسطینیوں کی وطن واپسی کا انکار تھا۔ اپریل 2021ء کے آخر میں، ہیومن رائٹس واچ (نیو یارک) نے ایک اہم سرخی کے ساتھ ایک اہم رپورٹ شائع کی، جس کا نام تھریشہولڈ کراسڈ تھا۔ اسرائیلی حکام رنگ برداری اور ظلم و ستم کے جرائم۔

مئی کے اوائل میں اسرائیل نے فلسطینی خاندانوں کو غیر قانونی طور پر شیخ جرح (یروشلم) میں گھروں سے بے دخل کرنے کی کوشش کی۔ لبنانی ناول نگار الیاس کھوری نے اس عمل کو ’مسلسل نقبہ‘ کا ایک حصہ قرار دیا ہے۔ یہ خاندان یروشلم کے اس حصے میں آباد تھے جب انہیں اسرائیلیوں نے گھروں سے بے دخل کر دیا تھا اور اب انہیں دوبارہ ملک بدر کر دیا جانا تھا۔

ان خاندانوں اور ان کے ہمسایوں نے نکلنے سے انکار کر دیا۔ انھیں مزاحمت کرنے کا حق ہے، کیونکہ ان کی سرزمین کو اقوام متحدہ نے زیر قبضہ فلسطینی علاقہ کے نام سے منسوب کیا ہے، اس زمین کو جس پر قبضہ کرنے والا یعنی اسرائیل انتظام کرتا ہے لیکن اسے تبدیل کرنے کا حق نہیں ہے۔ جب فلسطینیوں نے مزاحمت کی تو انہیں صیہونی آباد کاروں اور اسرائیلی بارڈر پولیس کی طرف سے سخت تشدد کا سامنا کرنا پڑا، جو فلسطینیوں کو ذلیل کرنے کی پالیسی کے تحت مسجد اقصیٰ میں داخل ہوئے تھے۔ او پی ٹی کا ایک حصہ غزہ کے فلسطینیوں نے بھی متنبہ کیا تھا کہ اگر اسرائیل اور صیہونیوں نے اشتعال انگیزی کو نہ روکا تو انہیں راکٹوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔ چونکہ حملوں کو روکنے کے لئے اسرائیل باز نہیں آیا، غزہ میں فلسطینیوں نے اسرائیل پر راکٹ فائر کیے۔ راکٹ بربریت کو جواز فراہم نہیں کر سکتے۔ یہ راکٹ ایک غیر قانونی قبضے کے بین الاقوامی قانون کے تعاون سے ایک مزاحمت کے حصے کے طور پر داغے گئے۔

اسرائیل نے انتہائی طاقت سے جوابی کارروائی کی، بچوں کو ہلاک کیا، شہری اہداف پر حملہ کیا اور میڈیا عمارت پر بمباری کی۔ 2006ء کے بعد سے غزہ، دنیا کے سب سے بڑے حراستی کیمپوں میں سے ایک کیمپ پر بمباری سے اسرائیل نے زیر قبضہ فلسطینی علاقہ کے انتظام کی مثال ہے۔ اقوام متحدہ خاموش ہے کیونکہ امریکی حکومت جنگ بندی کی قرارداد کی بھی اجازت سے انکار کرتی ہے۔ کوئی بھی عرب ریاست فلسطینیوں کے دفاع کے لئے اپنی فوجی طاقت استعمال کرنے کو تیار نہیں ہے۔ مثال کے طور پر، مصری فضائیہ کے لئے غزہ کے اوپر ایک ’نو فلائی زون‘ فراہم کرنا اتنا آسان ہو گا۔ اردن اور لبنان میں، جلا وطنی کے ساتھ فلسطینیوں نے دروازوں تک مارچ کیا جو انہیں اپنے وطن سے تقسیم کرتے ہوئے باڑ کے خلاف دھکے کھاتے ہوئے اپنے گھر جانے کے خواہاں تھے۔

راکٹ فائر سے شروع کر کے اس خوفناک اسرائیلی بیراج کو سمجھانا شروع کرنا کہانی کے پورے تناظر سے محروم کر دیتا ہے اور فلسطینیوں کو ان کے وقار اور ان کے مزاحمت کے حق سے محروم کرتا ہے۔ ہم فلسطینیوں کے ساتھ کھڑے ہیں، ان کے وطن کے حق میں، ان کے گھر واپس جانے کے حق اور قبضے کے خلاف مزاحمت میں حق کے ساتھ کھڑے ہیں۔ فلسطینیوں کے خلاف خوفناک تشدد پر ہمارے ردِ عمل کی تشکیل اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی قرارداد 1514 (1960ء) کے مطالعہ سے ہوئی ہے، آزادی کا عمل ناقابل تلافی اور ناقابل واپسی ہے اور سنگین بحرانوں سے بچنے کے لئے، اس کا خاتمہ ضروری ہے۔ اور اس سنگین بحرانوں سے بچنے کے لئے نوآبادیات اور اس سے وابستہ علیحدگی اور امتیاز کے تمام طریقوں کو ختم کرنا ہو گا۔