تاریخ

عام لوگوں کی تاریخ

ڈاکٹر مظہر عباس

ڈاکٹر مبارک علی، جو کہ معاصر تاریخی منظر نامے میں معتبر اور باوقار مورخ ہیں، نے جنوبی ایشیا میں تاریخ لکھنے کے موجودہ رحجانات (جو کہ نظریاتی اور قومی شناخت پر مبنی تھے) کو نہ صرف چیلنج کیا ہے بلکہ عام لوگوں کی تاریخ کو مقبول بنانے میں بھی کلیدی کردار ادا کیا ہے۔

مبارک علی نے 21 اپریل 1942ء کو ٹونک کے ترن خاندان (پشتون قبیلے) میں آنکھ کھولی۔ انھوں نے مدرسہ دارالعلوم خلیلیہ سے عربی، حدیث اور قرآن کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد باضابطہ تعلیم کے لئے، پرائمری سکول میں داخلہ لیا۔ تاہم، 1947ء میں برصغیر کی تقسیم نے ان کی تعلیم میں خلل پیدا کر دیا کیونکہ ان کے کنبے نے ٹونک (ہندوستان) سے حیدرآباد (پاکستان) ہجرت کی۔ حیدرآباد پہنچنے کے بعد انھوں نے خالد میموریل سکول میں داخلہ لیا اور سکول کے میگزین ’خالد‘ کے لئے مضامین اور مختصر کہانیاں لکھنا شروع کر دیں۔ وہ اپنی جیب خرچ کا بیشتر حصہ کتابیں خریدنے اور پڑھنے میں صرف کرتے تھے۔

سٹی کالج حیدرآباد سے کالج کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد انھوں نے حیدرآباد کے اسلامیہ ماڈل ہائی اسکول میں بطور اسکول ٹیچر، پیشہ وارانہ زندگی کا آغاز کیا۔ تاہم، سکول کے بچوں کے لئے امریکی حکومت کے زیر اہتمام خشک دودھ کے پیکٹ تقسیم کرنے کے تنازعہ پر انھیں سکول کے مالک نے ملازمت سے برطرف کر دیا۔ جب بارِ دیگر ان کو ملازمت سے برطرف کیا گیا تو انھوں نے سندھ یونیورسٹی جامشورو سے جنرل تاریخ کی تعلیم حاصل کرنے کا فیصلہ کیا۔ وہاں سے انھوں نے 1962ء میں جنرل تاریخ میں ایم اے کیا اور پہلی پوزیشن حاصل کی۔ 1963ء میں وہ یونیورسٹی میں جنرل تاریخ کے جونیئر لیکچرر کے عہدے کے لئے منتخب ہوئے۔

1970ء میں انھوں نے پی ایچ ڈی کی غرض سے لندن کے کوئین میری کالج میں داخلہ لے لیا تاہم وہ ڈاکٹریٹ پروگرام مکمل نہیں کر پائے۔ بعدازاں انھوں نے جرمنی کی روہر یونیورسٹی میں داخلہ لے لیا جہاں سے انھوں نے 1976ء میں پروفیسر بوسے کی نگرانی میں مغلوں کی تاریخ پر ایک مقالہ لکھ کر پی ایچ ڈی کی ڈگری مکمل کی۔ انھوں نے اپنے مقالے میں اس وقت مغل دربار کی ثقافت اور معاشرے کی وضاحت پر توجہ دی۔ بعد میں ان کا مقالہ ’مغل دربار‘کے عنوان سے کتاب کی صورت میں شائع ہوا۔

1977ء میں وطن واپس آ کر انھوں نے دوبارہ سندھ یونیورسٹی میں لیکچرار کے طور پہ نوکری شروع کر دی۔ تاہم، وائس چانسلر، شیخ ایاز، نے ان کی پی ایچ ڈی کی تعلیم کے دورانیہ کی تنخواہ کے تنازعے پر انھیں نوکری سے برخواست کر دیا۔ بعد ازاں یہ تنازعہ وفاقی وزیر برائے تعلیم، پیر آفتاب جیلانی، کے ذریعے حل ہو گیا اور انھیں ترقی دے کر نہ صرف ایسوسی ایٹ پروفیسر کا عہدہ دیا گیا بلکہ شعبہ جنرل تاریخ کا سربراہ بھی مقرر کیا گیا۔

1985ء میں سندھ یونیورسٹی میں خدمات انجام دیتے ہوئے انھوں نے لاہور میں تاریخ اور تاریخ نگاری پر ایک لیکچر دیا جس کی وجہ سے ان کی مقبولیت میں بے حد اضافہ ہوا۔ لاہور میں ان کی مقبولیت، یونیورسٹی آف سندھ کی انتظامیہ کے ساتھ جھڑپوں اور سیاسی رہنماؤں کی طلبہ کے امور میں دخل اندازی کی وجہ سے، انھوں نے سندھ یونیورسٹی چھوڑ دی اور 1989ء میں پنجاب یونیورسٹی میں جنوبی ایشیا ایریا سٹڈی سنٹر میں بطور پروفیسر نوکری شروع کر دی۔ تاہم جماعت اسلامی کے ساتھ نظریاتی اختلافات پر تناؤ نے انھیں سندھ یونیورسٹی واپس جانے پر مجبور کر دیا جہاں سے وہ 1989ء میں ریٹائر ہوئے تھے۔

انھیں اپنے طالب علمی کے دور میں ہی یہ احساس ہو گیا تھا کہ پاکستان میں صرف سیاسی تاریخ (فاتحین اور ان کی فتوحات کا حساب کتاب) اور قوم پرست تاریخ (جس کو ریاست کی سرپرستی حاصل ہے) کی تعلیم دی جاتی ہے، جبکہ سماجی، ثقافتی اور عام عوام اورمحنت کش طبقوں کی تاریخ کو نظر انداز کیا جاتا ہے۔

یہ بات ان کے لئے باعث تشویش رہی ہے اور تاریخ کو سمجھنے اور لکھنے لئے نہ صرف ان کے نقطہ نظر کو متاثر کیا بلکہ اس ضمن میں ان کی رہنمائی بھی فرمائی ہے۔ ان کا دعویٰ ہے کہ پاکستان میں تاریخ کے متن کو متاثر کرنے کے لئے تین نقطہ نظر موجود ہیں: اؤل، یہ کہ پاکستان کی تاریخ برصغیر کی 1947ء میں تقسیم اور ملک بننے سے مزید پیچھے نہیں جانی چاہئے۔ دوسرا، یہ کہ اس کو اسلامی کردار دینے کے لئے تاریخ 711ء میں سندھ پر عربوں کے حملے سے شروع ہونی چاہئے۔ اور تیسرا، یہ کہ پاکستان کی تاریخ قدیم زمانے (خاص طور پر ہڑپہ اور موہنجوڈارو کی تاریخ) سے ملنی چاہئے۔

ان تینوں میں سے، دوسری رائے پاکستان کی تاریخ کو نئی شکل دینے میں نہ صرف غالب ہے بلکہ تسلط بھی رکھتی ہے۔ یہ خیال کیا جاتا ہے کہ برصغیر میں انگریزوں کی آمد اور مسلمانوں اور ہندوؤں کے مابین دشمنی نے مسلم مورخین کو تاریخ نگاری کے لئے قوم پرستی کا انداز اپنانے کے لئے متاثر کیا۔ اشتیاق حسین قریشی، شیخ محمد اکرام اور خورشید کمال عزیز نے مسلم قوم پرستی کو فروغ دینے کے لئے تاریخ لکھی جس میں بنیادی طور پر فرقہ واریت (ہندووں اور مسلمانوں) سے متعلق واقعات کی تفصیل دی گئی ہے لہٰذا، انھوں نے پاکستانی تاریخ کا نمونہ ترتیب دیا اور ہندوستانی مسلمانوں کی علیحدگی پسندی کی شناخت کو بھی پیش کیا۔

اس طرح یہ دلیل دی جا سکتی ہے کہ اشرافیہ اور قوم پرست تاریخ پر زور دیا گیا ہے۔ تاہم، نچلے طبقات کی تاریخ یا مقبول تاریخ کو نظرانداز کیا گیا ہے۔ محمد علی صدیقی، جو کہ اردو ادب کے نامور اسکالر اور ماہر تعلیم ہیں، کہتے ہیں کہ پاکستان میں تاریخ نگاری مغل مورخین کی طرح چلتی ہے جہاں عام آدمی، اس کے حالات، اس کے طرز زندگی اور معاشرتی زندگی کا کوئی ذکر نہیں ملتا ہے۔ دوسرے لفظوں میں، کسان، کاریگر یا پیشہ وارانہ لوگ (جنہیں کمیں کہا جاتا ہے)، مزدور، خواتین اور دیگر پسماندہ گروہ غائب ہیں۔

ان گروہوں کو تاریخ میں اپنا مناسب مقام نہیں مل سکا کیونکہ ریاست اور حکمران جماعت مسلم لیگ نے تاریخ لکھنے کے عمل کو کنٹرول کیا اور پیشہ ور مورخین کی سرپرستی کرتے ہوئے علمی کتابوں کے ساتھ ساتھ درسی کتب میں بھی حکمران طبقے کے نقطہ نظر کو پیش کرنے کو ترجیح دی۔ لیگ نے زور دے کر کہا کہ یہ واحد سیاسی جماعت ہے جس نے قیام پاکستان کے لئے کام کیا۔ مسلم لیگ کے اس بیانیہ اور موقف نے دیگر تمام کرداروں کی، جنھوں نے آزادی کی جدوجہد میں کردار ادا کیا، جدوجہد اور کردار کو تسلیم نہیں کیا۔

تاہم، تاریخی تفہیم میں کچھ پیشرفت نئے طریقوں، نظریات اور نقطہ نظر نے تاریخ نگاری میں متعدد تبدیلیاں پیدا کی ہیں اور تاریخ لکھنے کے قوم پرست اور اشرافیہ کے طریقوں کو چیلنج کیا ہے۔ ایک حد تک، تاریخ جدید کی فہم اور تاریخ نگاری میں تجربات کے ان نئے طریقوں کو جدیدیت کے بعد کے فکری مداخلتوں کے ذریعہ ضروری سمجھا گیا ہے۔

مابعد جدیدیت نے مبارک علی سمیت پوری دنیا کے مورخین کو متاثر کیا۔ اس کے علاوہ، وہ خورشید کمال عزیز کی کتاب دی مرڈر آف ہسٹری سے بھی متاثر تھے۔ اس کتاب میں، عزیز نے بتایا ہے کہ سکولوں اور کالجوں میں پڑھائی جانے والی تاریخی عبارتیں بالکل منتخب، خصوصی اور مختلف اقسام کے تعصبات سے بھری ہیں۔

مثال کے طور پر، عزیز کے کام نے ایس ڈی پی آئی (Sustainable Development Policy Institute) کے پلیٹ فارم سے اسکالرز کے ایک گروپ کی طرف سے مشرف کے دور میں ایک رپورٹ’The Subtle Subversion: State of Text Books and Curriculum in Pakistan‘ شائع کرنے کے لئے اجتماعی مشق کے لئے راہ ہموار کی۔ اس رپورٹ میں نصاب میں بنیادی تبدیلیوں (بنیادی طور پر نفرت انگیز مواد کو ختم کرنے اور سبالٹرن اسٹڈیز پر مبنی زیادہ معروضی اور عقلی نصاب شامل کرنے) کی تجویز پیش کی گئی تھی جسے قوم پرست مکتب کے حامیوں کی سخت مزاحمت اور تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔

ڈاکٹرمبارک علی، ’ہسٹری فرام بیلو‘ کو مقبول بنانے کے وکیل، نے عزیز اور ایس ڈی پی آئی دونوں کی حمایت کی۔ انہوں نے تحقیقی مقالے اور کتابیں شائع کیں اور باقاعدگی سے اخباروں میں بھی لکھا۔ ایک وقت تھا، جب وہ علمی کلب میں اپنے مضامین پیش کرتے تھے جو انھوں نے اپنے دوست فرید کی مدد سے شروع کیا تھا۔ جب ان کے مضامین کی تعداد میں اضافہ ہوا تو انھوں نے ایک کتاب ’تاریخ کیا ہے‘ کی شکل میں شائع کرنے کے لئے اپنا اشاعتی مرکز ’آگاہی‘ قائم کیا۔ مختلف حلقوں سے ملنے والی آرا نے انھیں مزید کتابیں اور مضامین لکھنے کی ترغیب دی۔

کتابیں لکھنے کے علاوہ وہ فرنٹیئر پوسٹ، ڈان کے سنڈے میگزین اور ’آج کل‘میں بھی باقاعدگی کے ساتھ تاریخ کے مختلف موضوعات پہ لکھتے رہے۔ فرنٹیئر پوسٹ کے لئے لکھے گئے کالم دو کتابوں میں شائع ہوئے ہیں: ’Historian’s Dispute‘ اور ’In the Shadow of‘History‘۔

انھوں نے باقاعدہ طور پر ایک رسالہ ’تاریخ‘ بھی شائع کیا۔

ڈاکٹر مبارک علی کو پاکستان میں سبالٹرن سٹڈیز کے بانیوں میں شمار کیا جاتا ہے۔ وہ عام لوگوں کی تاریخ کے مستقل حمایتی رہے ہیں کیوں کہ عام لوگ ہی تاریخ کا مرکزی موضوع ہیں۔ تاریخ کو مقبول بنانے کے لئے انھوں نے جنوبی ایشین ثقافتی علوم کا مرکز قائم کیا کیونکہ انھیں یقین ہے کہ عام لوگوں کو خارج کرنے سے معاصر تاریخ کو سمجھنے میں کوئی مدد نہیں ملے گی۔

ان کے کام مغل ہندوستان سے لے کر سندھ میں قوم پرست تحریک تک اور تاریخ میں خواتین کے کردار سے لے کر کھانے اور پاک عادتوں کی تاریخ تک کے سلسلے کا احاطہ کرتے ہیں۔ اس کے دوران، ان کی اہم کامیابی تاریخ کے مضمون کو مقبول بنانا اور اس کو غیر تعلیمی سامعین تک قابل رسا بنانا ہے۔ اسی لئے ان کی زیادہ تر کتابیں اردو میں ہیں۔

’چیلنجز آف ہسٹری رائٹنگ ان جنوبی ایشیا‘ کے مصنف سید جعفر احمد علی لکھتے ہیں: ’مورخ ہونے کے ناطے ڈاکٹر مبارک علی کے بارے میں سب سے اہم بات یہ ہے کہ انھوں نے محض بادشاہوں کے بارے میں لکھنے کے بجائے عوام اور لوگوں پر لکھا ہے۔‘

Dr. Mazhar Abbas

مصنف نے شنگھائی یونیورسٹی سے تاریخ میں پی ایچ ڈی کی ہے اور جی سی یونیورسٹی فیصل آباد میں لیکچرار ہیں۔