فن و ثقافت

ڈاکٹر قیصرعباس روزنامہ جدوجہد کی مجلس ادارت کے رکن ہیں۔ وہ پنجاب یونیورسٹی  سے ایم اے صحافت کے بعد  پاکستان میں پی ٹی وی کے نیوزپروڈیوسر رہے۔ جنرل ضیا کے دور میں امریکہ آ ئے اور پی ایچ ڈی کی۔ کئی یونیورسٹیوں میں پروفیسر، اسسٹنٹ ڈین اور ڈائریکٹر کی حیثیت سے کام کرچکے ہیں۔ آج کل سدرن میتھوڈسٹ یونیورسٹی میں ایمبری ہیومن رائٹس پروگرام کے ایڈوائزر ہیں۔


دیوداس کا جادو اور سماجی بے حسی!

ر صغیر کی فلم انڈسٹری ایک ایسے انقلابی ہدایت کار کی منتظر ہے جو اکیسویں صدی کے تخلیقی تقاضوں کو پورا کرنے کی صلاحیت بھی رکھتا ہو اور معاشرے کے تضادات کا ادراک بھی!

’آباد نگر میں رہتا تھا اور اجڑی غزلیں کہتا تھا‘

اسلم کولسری اوکاڑہ کے نواحی گاؤں کولسر کے رہنے والے تھے۔ یہ اس علاقے میں تھا جس پر اوکاڑہ کینٹ بنا اور اس گاؤں کا وجود ہی ختم ہوگیا مگر اسلم کولسری کے دس مجموعے اس گاؤں کی یاد سے معطر ہیں۔