Day: اکتوبر 25، 2021

مونا نصیر کا تعلق سابقہ فاٹا سے ہے۔ انہوں نے لندن یونیورسٹی سے انسانی حقوق میں ڈگری حاص کی ہے۔ ان کا ٹوئٹر ہینڈل @mo2005 ہے۔


ٹی ٹی پی سے مذاکرات کا نتیجہ خون خرابے کی شکل میں نکلے گا

ایسے بے رحم قاتلوں کے ساتھ مذاکرات، جو جنگ کے بعد اور مضبوط ہو چکے ہیں، نہ صرف حکومت کی ساکھ کو متاثر کرے گا بلکہ ٹی ٹی پی کو جواز فراہم کرنے کے علاوہ اس کے اقدامات کو جائز بنانے کا سبب بنے گا۔ اپنے تذویراتی مقاصد کے لئے ہم افغان طالبان کی چاہے جتنی بھی حمایت کر لیں، ٹی ٹی پی کے ہاتھوں اسی ہزار پاکستانیوں کی ہلاکت کو کسی طور جواز فراہم نہیں کیا جا سکتا۔

محمد مقبول شیروانی: کشمیریوں کا مسیحا یا غدار

”شہید مقبول شیروانی“، کو پوسٹر پر چھپی تحریر کے مطابق 7 نومبر 1947ء کو 19 برس کی عمر میں، شمال مغربی سرحدی صوبے کے قبائلی حملہ آوروں نے مار دیا جو کہ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان پہلی سرحدی جنگ تھی۔